View RSS Feed

T@nHA.D!L

بس آنکھ لایا ہوں اور وُہ بھی تَر نہیں لایا

Rate this Entry
by , 13th January 2012 at 10:57 AM (839 Views)
بس آنکھ لایا ہوں اور وُہ بھی تَر نہیں لایا
حوالہ دھیان کا مَیں مُعتبر نہیں لایا
سوائے اسکے تعارف کوئی نہیں میرا
میں وُہ پرندہ ہوں جو اپنے پر نہیں لایا
نجانے کس کو ضرورت پڑے اندھیرے میں
چراغ راہ میں دیکھا تھا گھر نہیں لایا
مُجھے اکیلا حدِ وقت سے گُزرنا ہے
میں اپنے ساتھ کوئی ہم سفر نہیں لایا
گُلِ سیاہ کھِلا ہے تو رو پڑا ہوں میں
کہ روشنی کا شجر بھی ثمر نہیں لایا
شُمار کر ابھی چنگاریاں مرے ناقد
کہ مَیں الاؤ اُٹھا کے اِدھر نہیں لایا
مری روانی کی اب خیر ہو مرے مالک
ستارہ ٹُوٹ کے اچھی خبر نہیں لایا!
بھنور نکال کے لایا ہوں میں کنارے پر
مُجھے نکال کے کوئی بھنور نہیں لایا

Submit "بس آنکھ لایا ہوں اور وُہ بھی تَر نہیں لایا" to Digg Submit "بس آنکھ لایا ہوں اور وُہ بھی تَر نہیں لایا" to Twitter Submit "بس آنکھ لایا ہوں اور وُہ بھی تَر نہیں لایا" to Facebook Submit "بس آنکھ لایا ہوں اور وُہ بھی تَر نہیں لایا" to del.icio.us Submit "بس آنکھ لایا ہوں اور وُہ بھی تَر نہیں لایا" to StumbleUpon

Categories
Uncategorized

Comments