6


کراچی:
پاکستانی صدر آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ پی آئی اے، ریلوئے اور واپڈا کمزور ہوئے ہیں مگر تباہی کی طرف نہیں جارہے جب کہ پی آئی کے مقابلے میں کوئی اور ایئر لائن نہیں لائی جارہی۔
پاکستان کے نجی ٹی وی چینل جیو نیوز کے اینکر پرسن حامد میر کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے آصف زرداری نے وزیر دفاع کو حکم دیا کہ انڈس ائیر لائنز کا لائسنس منسوخ کیا جائےچاہیے وہ قانون کے مطابق ہی کیوں نہ ہو ۔انہوں نے کہاکہ میری بہن نے اپنی زندگی سیاست کیلئے وقف کردی ہے اس کے پاس فرصت نہیں کہ ایئر لائن چلائے۔صدر پاکستان نے کہاکہ پرویز مشرف کا ٹرائل کرنے سے فوج کے مورال پر برااثر پڑتااگر ٹرائل کرناہی ہوا تو پارلیمنٹ کرے گی جیسے تمام اختیارات سونپ دیئے ہیں۔انہوں نے کہاکہ قبل از وقت انتخابات کے مطالبے پر نواز شریف سے بات کرنے کو تیار ہوں ۔شاہ محمود قریشی کو ریمنڈڈیوس کی رہائی پر مخالفت کرنے بعد وزرارت سے علیحدہ کرنےاور جوہری اثاثوں کیلئے خطرہ ہونے کے سوال پرصدر آصف علی زرداری نے کہاکہ اس میں کوئی سچائی نہیں۔ان کا کہنا تھا کہ ایک زرداری سب پر بھاری کے نعرے پر پارٹی میں بھی پابندی لگادی ہے جب کہ ذوالفقار مزار کو کس نے توڑا مجھے اس بارے میں علم نہیں میں تو ان کے بارے میں یہ ہی کہہ سکتاہوں کہ دیکھا جو تیر کھا کر کمیں گاہ کی طرف ۔۔ اپنے ہی دوست سے ملاقات ہوگئی۔صدر زرداری نے کہاکہ میمو کیس پر ہونے انکوائری پر وہ پارلیمانی کمیٹی کا فیصلہ قبول کریں گے کیونکہ پارلیمنٹ بالادست ادارہ ہے۔ان کا کہنا تھا کہ میمو کے معاملے پرغیر ضروری پبلسٹی دی گئی کیونکہ حقانی کا کام ہی یہ تھا کہ امریکا میں موجود ہر موثر آدمی سے رابطہ رکھا جائے وہ ہوسکتاہے کہ منصور اعجاز سے ملا ہو۔زرداری نے کہاکہ میمو پر منصور کے لکھے گئے مضمون پر کارروائی وکلاء کے مشورے کے بعد نہیں کی جن کا کہنا تھا کہ اس سے ملک کے مفاد کو نقصان ہوگا۔ان کا کہناتھا کہ میمو سازش کے پیچھے وہ لوگ ہیں جو پاکستان کو نقصان پہنچانا چاہ رہے ہیں جب کہ اداروں کی درمیان لڑائی کا تاثر غلط ہے کیونکہ یہ سب کچھ ارتقائی عمل کا حصہ ہے۔حکومت کی فوج اور عدلیہ سے کوئی لڑائی نہیں جب کہ اتحادیوں کی تلخ کلامی کو لڑائی سے تعبیر نہیں کرنا چاہیے۔صدر پاکستان نے کہا کہ وزیراعظم بااختیار ہیں،انہیں کوئی چیزتنگ کرئےگی تو وہ پوزیشن اختیار کریں گےکیونکہ پوزیشن لینا ان کا حق ہے۔انہوں نے کہاکہ پارٹی کی اکثریت سمجھتی ہے کہ سوئس کورٹ کو خط نہ لکھا جائے کیونکہ ایسا کرنے کا مطلب بے نظیر بھٹو کی قبر کا ٹرائل کرنا ہے۔آصف علی زرداری نے کہاکہ میں نے بی بی اور بھٹو صاحب سے کیے گئے تمام وعدے پورے کردئیے ہیں۔