Results 1 to 10 of 10

آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

This is a discussion on آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک within the Hadith-o-Sunnat forums, part of the Mera Deen Islam category; صحیح بخاری کتاب الجنائز باب: ان کے بیان میں جنہوں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں ...

  1. #1
    Senior Student
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    Karachi
    Posts
    142

    آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    صحیح بخاری
    کتاب الجنائز
    باب: ان کے بیان میں جنہوں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں اپنا کفن خود ہی تیار رکھا اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس پر کسی طرح کا اعتراض نہیں فرمایا
    حدیث نمبر: 1277

    حدثنا عبد الله بن مسلمة،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثنا ابن أبي حازم،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن أبيه،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن سهل ـ رضى الله عنه ـ أن امرأة،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ جاءت النبي صلى الله عليه وسلم ببردة منسوجة فيها حاشيتها ـ أتدرون ما البردة قالوا الشملة‏.‏ قال نعم‏.‏ قالت نسجتها بيدي،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فجئت لأكسوكها‏.‏ فأخذها النبي صلى الله عليه وسلم محتاجا إليها،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فخرج إلينا وإنها إزاره،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فحسنها فلان فقال اكسنيها،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ ما أحسنها‏.‏ قال القوم ما أحسنت،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ لبسها النبي صلى الله عليه وسلم محتاجا إليها،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ ثم سألته وعلمت أنه لا يرد‏.‏ قال إني والله ما سألته لألبسها إنما سألته لتكون كفني‏.‏ قال سهل فكانت كفنه‏.‏
    ہم سے عبداللہ بن مسلمہ قعنبی نے بیان کیا کہا کہ ہم سے عبدالعزیز بن ابی حازم نے بیان کیا ان سے ان کے باپ نے اور ان سے سہل رضی اللہ عنہ نے کہ ایک عورت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں ایک بنی ہوئی حاشیہ دار چادر آپ کے لیے تحفہ لائی۔ سہل بن سعد رضی اللہ عنہ نے (حاضرین سے) پوچھا کہ تم جانتے ہو چادر کیا؟ لوگوں نے کہا کہ جی ہاں! شملہ۔ سہل رضی اللہ عنہ نے کہا ہاں شملہ (تم نے ٹھیک بتایا) خیر اس عورت نے کہا کہ میں نے اپنے ہاتھ سے اسے بنا ہے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو پہنانے کے لیے لائی ہوں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے وہ کپڑا قبول کیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس کی اس وقت ضرورت بھی تھی پھر اسے ازار کے طور پر باندھ کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم باہر تشریف لائے تو ایک صاحب (عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ) نے کہا کہ یہ تو بڑی اچھی چادر ہے یہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم مجھے پہنا دیجئیے۔ لوگوں نے کہا کہ آپ نے (مانگ کر) کچھ اچھا نہیں کیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے اپنی ضرورت کی وجہ سے پہنا تھا اور تم نے یہ مانگ لیا حالانکہ تم کو معلوم ہے کہ آنحضور صلی اللہ علیہ وسلم کسی کا سوال رد نہیں کرتے۔ عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ نے جواب دیا کہ خدا کی قسم! میں نے اپنے پہننے کے لیے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے یہ چادر نہیں مانگی تھی۔ بلکہ میں اسے اپنا کفن بناؤں گا۔ سہل رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ وہی چادر ان کا کفن بنی۔

  2. #2
    Moderator lovelyalltime's Avatar
    Join Date
    Jun 2008
    Posts
    3,393

    Re: آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    *
    Last edited by lovelyalltime; 3rd April 2012 at 02:06 PM.

  3. #3
    Senior Student
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    Karachi
    Posts
    142

    Re: آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    صحیح بخاری
    صفۃ الصلوٰۃ
    باب: نماز میں خشوع کا بیان
    حدیث نمبر: 741

    حدثنا إسماعيل، قال حدثني مالك، عن أبي الزناد، عن الأعرج، عن أبي هريرة، أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال " هل ترون قبلتي ها هنا والله ما يخفى على ركوعكم ولا خشوعكم، وإني لأراكم وراء ظهري ".

    ہم سے اسماعیل بن ابی اویس نے بیان کیا، کہا کہ مجھ سے امام مالک رحمہ اللہ نے ابوالزناد سے بیان کیا، انھوں نے اعرج سے، انھوں نے حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ، کیا تم سمجھتے ہو کہ میرا منہ ادھر (قبلہ کی طرف) ہے۔
    خدا کی قسم تمہارا رکوع اور تمہارا خشوع مجھ سے کچھ چھپا ہوا نہیں ہے، میں تمہیں اپنے پیچھے سے بھی دیکھتا رہتا ہوں

  4. #4
    Senior Student
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    Karachi
    Posts
    142

    Re: آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    صحیح بخاری
    کتاب استتابہ المرتدین
    باب: خارجیوں اور بے دینوں سے ان پر دلیل قائم کر کے لڑنا
    وقول الله تعالى ‏ {‏ وما كان الله ليضل قوما بعد إذ هداهم حتى يبين لهم ما يتقون‏}‏‏.‏ وكان ابن عمر يراهم شرار خلق الله وقال إنهم انطلقوا إلى آيات نزلت في الكفار فجعلوها على المؤمنين‏.‏
    اللہ تعالیٰ نے فرمایا اللہ تعالیٰ ایسا نہیں کرتاکہ کسی قوم کو ہدایت کرنے کے بعد (یعنی ایمان کی توفیق دینے کے بعد) ان سے مواخذہ کرے جب تک ان سے بیان نہ کرے کہ فلاں فلاں کاموں سے بچے رہو اور حضرت عبداللہ بن عمر خارجی لوگوں کو بدترین خلق اللہ سمجھتے تھے، کہتے تھے انہوں نے کیا کیا جو آیتیں کافروں کے باب میں اتری تھیں ان کو مسلمانوں پر چسپاں کر دیا۔

    حدیث نمبر: 6930

    حدثنا عمر بن حفص بن غياث،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثنا أبي،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثنا الأعمش،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثنا خيثمة،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثنا سويد بن غفلة،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال علي ـ رضى الله عنه ـ إذا حدثتكم عن رسول الله صلى الله عليه وسلم حديثا فوالله،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ لأن أخر من السماء أحب إلى من أن أكذب عليه،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ وإذا حدثتكم فيما بيني وبينكم فإن الحرب خدعة،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ وإني سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول ‏"‏ سيخرج قوم في آخر الزمان،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حداث الأسنان،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ سفهاء الأحلام،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ يقولون من خير قول البرية،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ لا يجاوز إيمانهم حناجرهم،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ يمرقون من الدين كما يمرق السهم من الرمية،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فأينما لقيتموهم فاقتلوهم،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فإن في قتلهم أجرا لمن قتلهم يوم القيامة ‏"‏‏.‏

    ہم سے عمر بن حفص بن غیاث نے بیان کیا، کہا ہم ہمارے سے والد نے، کہا ہم سے اعمش نے، کہا ہم سے خیثمہ بن عبدالرحمٰن نے، کہا ہم سے سوید بن غفلہ نے کہ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے کہا جب میں تم سے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی کوئی حدیث بیان کروں تو قسم خدا کی اگر میں آسمان سے نیچے گرپڑوں یہ مجھ کو اس سے اچھا لگتا ہے کہ میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم پر جھوٹ باندھوں ہاں جب مجھ میں تم میں آپس میں گفتگو ہو تو اس میں بنا کر بات کہنے میں کوئی قباحت نہیں کیونکہ (آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے) لڑائی تدبیر اور مکر کا نام ہے۔ دیکھو میں نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا ہے آپ فرماتے تھے اخیر زمانہ قریب ہے جب ایسے لوگ مسلمانوں میں نکلیں گے جو نوعمر بیوقوف ہوں گے (ان کی عقل میں فتور ہو گا) ظاہر میں تو ساری خلق کے کلاموں میں جو بہتر ہے (یعنی حدیث شریف)وہ پڑھیں گے مگر درحقیقت ایمان کا نور ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا، وہ دین سے اس طرح باہر ہو جائیں گے جیسے تیر شکار کے جانور سے پار نکل جاتا ہے۔ (اس میں کچھ لگا نہیں رہتا) تم ان لوگوں کو جہاں پانا بے تامل قتل کرنا، ان کو جہاں پاؤ قتل کرنے میں قیامت کے دن ثواب ملے گا۔

  5. #5
    iTT Student
    Join Date
    Jan 2012
    Location
    Pakistan
    Age
    16
    Posts
    12

    Re: آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    zbrdst

  6. #6
    Senior Student
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    Karachi
    Posts
    142

    Re: آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    صحیح بخاری
    کتاب استسقاء
    باب: قحط کے وقت لوگ امام سے پانی کی دعا کرنے کے لیے کہہ سکتے ہیں
    حدیث نمبر: 1008

    حدثنا عمرو بن علي،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال حدثنا أبو قتيبة،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال حدثنا عبد الرحمن بن عبد الله بن دينار،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن أبيه،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال سمعت ابن عمر،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ يتمثل بشعر أبي طالب وأبيض يستسقى الغمام بوجهه ثمال اليتامى عصمة للأرامل
    ہم سے عمرو بن علی نے بیان کیا، انہوں نے کہا کہ ہم سے ابو قتیبہ نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے عبدالرحمٰن بن عبداللہ بن دینار نے، ان سے ان کے والد نے، کہا کہ میں نے ابن عمر رضی اللہ عنہما کو ابوطالب کا یہ شعر پڑھتے سنا تھا (ترجمہ) گورا ان کا رنگ ان کے منہ کے واسطہ سے بارش کی (اللہ سے) دعا کی جاتی ہے۔ یتیموں کی پناہ اور بیواؤں کے سہارے۔

  7. #7
    Senior Student
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    Karachi
    Posts
    142

    Re: آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    صحیح بخاری
    مواقیت الصلوات
    باب: اس بیان میں کہ ظہر کا وقت سورج ڈھلنے پر ہے
    وقال جابر كان النبي صلى الله عليه وسلم يصلي بالهاجرة
    اور حضرت جابر رضی اللہ عنہ نے کہا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم دوپہر کی گرمی میں (ظہر کی) نماز پڑھتے تھے۔


    حدیث نمبر: 540


    حدثنا أبو اليمان،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال أخبرنا شعيب،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن الزهري،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال أخبرني أنس بن مالك،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ أن رسول الله صلى الله عليه وسلم خرج حين زاغت الشمس فصلى الظهر،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فقام على المنبر،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فذكر الساعة،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فذكر أن فيها أمورا عظاما ثم قال ‏"‏ من أحب أن يسأل عن شىء فليسأل،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ فلا تسألوني عن شىء إلا أخبرتكم ما دمت في مقامي هذا ‏"‏‏.‏ فأكثر الناس في البكاء،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ وأكثر أن يقول ‏"‏ سلوني ‏"‏‏.‏ فقام عبد الله بن حذافة السهمي فقال من أبي قال ‏"‏ أبوك حذافة ‏"‏‏.‏ ثم أكثر أن يقول ‏"‏ سلوني ‏"‏‏.‏ فبرك عمر على ركبتيه فقال رضينا بالله ربا،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ وبالإسلام دينا،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ وبمحمد نبيا‏.‏ فسكت ثم قال ‏"‏ عرضت على الجنة والنار آنفا في عرض هذا الحائط فلم أر كالخير والشر ‏"‏‏.‏

    ہم سے ابوالیمان حکم بن نافع نے بیان کیا، کہا ہم سے شعیب نے زہری کی روایت سے بیان کیا، انھوں نے کہا کہ مجھے انس بن مالک رضی اللہ عنہ نے خبر دی کہ جب سورج ڈھلا تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم حجرہ سے باہر تشریف لائے اور ظہر کی نماز پڑھی۔ پھر منبر پر تشریف لائے۔ اور قیامت کا ذکر فرمایا۔ اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ قیامت میں بڑے عظیم امور پیش آئیں گے۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اگر کسی کو کچھ پوچھنا ہو تو پوچھ لے۔ کیونکہ جب تک میں اس جگہ پر ہوں تم مجھ سے جو بھی پوچھو گے۔ میں اس کا جواب ضرور دوں گا۔ لوگ بہت زیادہ رونے لگے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم برابر فرماتے جاتے تھے کہ جو کچھ پوچھنا ہو پوچھو۔ عبداللہ بن حذافہ سہمی کھڑے ہوئے اور دریافت کیا کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم میرے باپ کون ہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تمہارے باپ حذافہ تھے۔ آپ اب بھی برابر فرما رہے تھے کہ پوچھو کیا پوچھتے ہو۔ اتنے میں عمر رضی اللہ عنہ ادب سے گھٹنوں کے بل بیٹھ گئے اور انھوں نے فرمایا کہ ہم اللہ تعالیٰ کے مالک ہونے، اسلام کے دین ہونے اور محمد ( صلی اللہ علیہ وسلم ) کے نبی ہونے سے راضی اور خوش ہیں۔ (پس اس گستاخی سے ہم باز آتے ہیں کہ آپ سے جا اور بے جا سوالات کریں) اس پر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم خاموش ہو گئے۔ پھر آپ نے فرمایا کہ ابھی ابھی میرے سامنے جنت اور جہنم اس دیوار کے کونے میں پیش کی گئی تھی۔ پس میں نے نہ ایسی کوئی عمدہ چیز دیکھی (جیسی جنت تھی) اور نہ کوئی ایسی بری چیز دیکھی (جیسی دوزخ تھی)۔

  8. #8
    Senior Student
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    Karachi
    Posts
    142

    Re: آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    صحیح بخاری
    کتاب الفتن
    باب: نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمانا کہ فتنہ مشرق کی طرف سے اٹھے گا

    حدیث نمبر: 7094

    حدثنا علي بن عبد الله،‏‏‏‏ حدثنا أزهر بن سعد،‏‏‏‏ عن ابن عون،‏‏‏‏ عن نافع،‏‏‏‏ عن ابن عمر،‏‏‏‏ قال ذكر النبي صلى الله عليه وسلم ‏"‏ اللهم بارك لنا في شأمنا،‏‏‏‏ اللهم بارك لنا في يمننا ‏"‏‏.‏ قالوا وفي نجدنا‏.‏ قال ‏"‏ اللهم بارك لنا في شأمنا،‏‏‏‏ اللهم بارك لنا في يمننا ‏"‏‏.‏ قالوا يا رسول الله وفي نجدنا فأظنه قال في الثالثة ‏"‏ هناك الزلازل والفتن،‏‏‏‏ وبها يطلع قرن الشيطان ‏"‏‏.‏

    ہم سے علی بن عبداللہ مدینی نے بیان کیا، انہوں نے کہا ہم سے ازہر بن سعد نے بیان کیا، ان سے ابن عون نے بیان کیا، ان سے نافع نے بیان کیا، ان سے حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما نے بیان کیا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اے اللہ! ہمارے ملک شام میں ہمیں برکت دے، ہمارے یمن میں ہمیں برکت دے۔ صحابہ نے عرض کیا اور ہمارے نجد میں؟ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے پھر فرمایا اے اللہ ہمارے شام میں برکت دے، ہمیں ہمارے یمن میں برکت دے۔ صحابہ نے عرض کی اورہمارے نجد میں؟ میرا گمان ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے تیسری مرتبہ فرمایا وہاں زلزلے اور فتنے ہیں اور وہاں شیطان کا سینگ طلوع ہو گا۔

  9. #9
    iTT Student
    Join Date
    Jul 2012
    Location
    Karachi/Pakistan
    Posts
    3

    Re: آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    Quote Originally Posted by bheram View Post
    صحیح بخاری
    کتاب الفتن
    باب: نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمانا کہ فتنہ مشرق کی طرف سے اٹھے گا

    حدیث نمبر: 7094

    حدثنا علي بن عبد الله،‏‏‏‏ حدثنا أزهر بن سعد،‏‏‏‏ عن ابن عون،‏‏‏‏ عن نافع،‏‏‏‏ عن ابن عمر،‏‏‏‏ قال ذكر النبي صلى الله عليه وسلم ‏"‏ اللهم بارك لنا في شأمنا،‏‏‏‏ اللهم بارك لنا في يمننا ‏"‏‏.‏ قالوا وفي نجدنا‏.‏ قال ‏"‏ اللهم بارك لنا في شأمنا،‏‏‏‏ اللهم بارك لنا في يمننا ‏"‏‏.‏ قالوا يا رسول الله وفي نجدنا فأظنه قال في الثالثة ‏"‏ هناك الزلازل والفتن،‏‏‏‏ وبها يطلع قرن الشيطان ‏"‏‏.‏

    ہم سے علی بن عبداللہ مدینی نے بیان کیا، انہوں نے کہا ہم سے ازہر بن سعد نے بیان کیا، ان سے ابن عون نے بیان کیا، ان سے نافع نے بیان کیا، ان سے حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما نے بیان کیا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اے اللہ! ہمارے ملک شام میں ہمیں برکت دے، ہمارے یمن میں ہمیں برکت دے۔ صحابہ نے عرض کیا اور ہمارے نجد میں؟ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے پھر فرمایا اے اللہ ہمارے شام میں برکت دے، ہمیں ہمارے یمن میں برکت دے۔ صحابہ نے عرض کی اورہمارے نجد میں؟ میرا گمان ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے تیسری مرتبہ فرمایا وہاں زلزلے اور فتنے ہیں اور وہاں شیطان کا سینگ طلوع ہو گا۔
    نجد.jpg
    گوگل ارتھ کے نقشے میں دیکھئے مدینے کے عین مشرق میں مشہور ومعروف نجد جسے آج ’’ریاض ‘‘ کہا جاتا ہے ، صاف نظر آرہا ہے۔

  10. #10
    Senior Student
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    Karachi
    Posts
    142

    Re: آج کی حدیث مبارکہ.........سلسلہِ حدیث مبارک

    حدثنا آدم،‏‏‏‏ حدثنا شعبة،‏‏‏‏ حدثنا محمد بن زياد،‏‏‏‏ قال سمعت أبا هريرة ـ رضى الله عنه ـ قال أخذ الحسن بن علي ـ رضى الله عنهما ـ تمرة من تمر الصدقة،‏‏‏‏ فجعلها في فيه،‏‏‏‏ فقال النبي صلى الله عليه وسلم ‏"‏ كخ كخ ـ ليطرحها ثم قال ـ أما شعرت أنا لا نأكل الصدقة ‏"‏‏


    ہم سے آدم بن ابی ایاس نے بیان کیا انہوں نے کہا کہ ہم سے شعبہ نے بیان کیا انہوں نے کہا کہ ہم سے محمد بن زیاد نے بیان کیا کہا کہ میں نے ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے سنا انہوں نے بیان کیا کہ حسن بن علی رضی اللہ عنہما نے صدقہ کی کھجوروں کے ڈھیر سے ایک کھجور اٹھا کر اپنے منہ میں ڈال لی تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا۔ چھی چھی! نکالو اسے۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ کیا تمہیں معلوم نہیں کہ ہم لوگ صدقہ کا مال نہیں کھاتے۔

    صحیح بخاری ،کتاب الزکوٰۃ ،باب: نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی آل پر صدقہ کا حرام ہونا،حدیث نمبر : 1491

    ..................................
    فقال لها أبو بكر إن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال ‏"‏ لا نورث ما تركنا صدقة

    ابو بکرنے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تھا کہ" ہمارا ورثہ تقسیم نہیں ہوتا ' ہمارا ترکہ صدقہ ہے"
    صحیح بخاری ،کتاب فرض الخمس ،باب: خمس کے فرض ہونے کا بیان ،حدیث
    نمبر : 3093

    .................................

    فقال أبو بكر إن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال ‏"‏ لا نورث،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ ما تركنا فهو صدقة،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ إنما يأكل آل محمد من هذا المال

    ابوبکر نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم خود فرماگئے ہیں کہ ہماری میراث نہیں ہوتی۔ ہم (انبیاء ) جو کچھ چھوڑ جاتے ہیں وہ صدقہ ہوتا ہے
    اور یہ کہ آل محمد کو ایسی صدقہ کے مال سے کھلایا جائے گا ۔

    صحیح بخاری
    کتاب فضائل اصحاب النبی
    باب: رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے رشتہ داروں کے فضائل اور فاطمہ بنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے فضائل کا بیان
    وقال النبي صلى الله عليه وسلم ‏"‏ فاطمة سيدة نساء أهل الجنة ‏"‏‏.‏
    اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تھا کہ فاطمہ رضی اللہ عنہا جنت کی عورتوں کی سردار ہیں۔ حدیث نمبر: 3712

    .................................
    ستةٌ لَعَنْتُهم ولعنَهمْ اللهُ وكلُّ نبيٍّ مُجابٌ : الزائدُ في كتابِ اللهِ، والمُكَذِّبُ بقدَرِ اللهِ، والمُتسلطُ بالجبروتِ فيُعِزُّ بذلكِ منَ أَذَلَّ اللهُ ويذلُّ منْ أعزَّ اللهُ، والمستَحِلُّ لحَرِمِ اللهِ، والمستحلُّ منْ عِتْرَتِي ما حَرَّمَ اللهُ، والتاركُ لسنتِي

    عائشہ کے مطابق رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ " چھ وہ چیزیں ہیں جن پر میں لعنت بھیجتا ہوں اور اللہ بھی لعنت فرماتا ہے جبکہ ہر نبی کی دعا قبول ہوا کرتی ہے
    1۔ اللہ کی تقدیر کو جھٹلانے والا
    2۔ اللہ کی کتاب میں ذیادتی کرنے والا
    3۔ اللہ کے حکموں کو قابو میں کرنے والا
    4۔اللہ کی حرام کی ہوئی چیزوں کو حلال بنائے
    5۔ میری عترت (آل محمد(( کے لئے وہ چیز حلال بتائے جس کو اللہ نے حرام کیا ہے
    6۔ میری سنت کو چھوڑ دے

    الراوي: عائشة وعبدالله بن عمر المحدث: السيوطي - المصدر: الجامع الصغير - الصفحة أو الرقم: 4660
    خلاصة حكم المحدث: صحيح



Similar Threads

  1. Replies: 47
    Last Post: 12th July 2013, 12:20 AM
  2. Replies: 3
    Last Post: 12th April 2012, 03:49 AM
  3. Replies: 1
    Last Post: 12th April 2012, 03:48 AM
  4. Replies: 0
    Last Post: 17th January 2012, 02:21 PM
  5. عیسائی پادری سے مرزا غلام کا مباحثہ
    By Mujahid Mohammad in forum Khatm e Nubuwwat
    Replies: 6
    Last Post: 26th October 2011, 04:30 PM

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •  
About us
ITTaleem - Pakistan's most prominent IT education forum initiating discussions on information technology essentials, software reviews, and tech updates.
Join us